PostHeaderIcon میری تنہائی کو اُس نے اور تنہا کر دیا

شیئر کیجئے

61118_4903797999091_1903002782_nمیری تنہائی کو اُس نے اور تنہا کر دیا
جھیل سی آنکھیں تھیں اِن کو خشک صحرا کر دیا

ہجر اچھا تھا جب اُس کو سوچ کر جیتے تھے ہم
اِس فریبِ وصل نے دل کو تو پیاسا کر دیا

گزرے لمحے اشک بن کر آنکھ میں روشن ہوئے
اُس کی یادوں نے اندھیرے کو بھی اجلا کر دیا

اِن لبوں پر آج بھی اُ س کی خوشی کی ہے دعا
جس نے میری ہر خوشی پر غم کا سایہ کر دیا

اُس کی یادیں خود بخود شاہین اِس میں آ گئیں
میں نے بس اتنا کیا تھا، دل کو رستہ کر دیا


شیئر کیجئے


5 تبصرے تا “میری تنہائی کو اُس نے اور تنہا کر دیا”

تبصرہ کریں



My Facebook
Facebook Pagelike Widget
Aanchal Facebook
Facebook Pagelike Widget
تبصرہ جات
Total Visits: Total Visits