محفوظات برائے November, 2013

PostHeaderIcon 35340_112785735438919_100001224802324_81787_8116953_n

PostHeaderIcon اے عشق تری توقیر ہے کیا

touqeer

PostHeaderIcon اے عشق تری توقیر ہے کیا

PostHeaderIcon اے عشق تری توقیر ہے کیا

اے عشق تُو گردِ سفر بنا ، تری اور بھلا توقیر ہے کیا
تو خود ہی حسرت کا مارا ،ترا خواب ہے کیا تعبیر ہے کیا

اے عشق تُو بکتا رہتا ہے ،کبھی راہوں میں کبھی بانہوں میں
تُو بوجھ ہے دل کی دنیا کا ، مرے واسطے تُو جاگیر ہے کیا؟

اے عشق مزار پہ رقص ترا ، اور کتبوں پر ہے عکس ترا
تُو بجھتے دیے کا دھواں ہے بس ، تُو کیا جانے تنویر ہے کیا

تجھے سنا تھا میں نے قصوں میں ، اِ س تن پر تو اب جھیلا ہے
مرا روپ رنگ تو زرد ہوا ، مجھے خبر نہیں تصویر ہے کیا

تُو میم سے عین بنا تھا کیوں؟اب چین سے بین بنا ہے کیوں؟
میں اب تک پوچھتی پھرتی ہوں، مرے پیروں میں زنجیر ہے کیا

ان اشکوں کا تو ذکر ہی کیا، تجھے عشق لہو سے بھی لکھا
کبھی پڑھ تو سہی ان نوحوں کو، تجھے علم تو ہو تحریر ہے کیا

touqeer

PostHeaderIcon ہجر اثاثہ رہ جاتا ہے

ہجر اثاثہ رہ جاتا ہے
ہاتھ میں کاسہ رہ جاتا ہے

جب امید نہ باقی ہو تو
صرف دلاسہ رہ جاتا ہے

زخم بہت سے مل جاتے ہیں
وقت ذرا سا رہ جاتا ہے

دل سے درد نکل کر بھی تو
اچھا خاصا رہ جاتا ہے

موجیں جب بھی چھو کر گزریں
ساحل پیاسا رہ جاتا ہے

ایک شناسائی کی دھن میں
دکھ ہی شناسا رہ جاتا ہے

وقت بھلا دیتا ہے سب کچھ
صرف خلاصہ رہ جاتا ہے

hijr asasa

hijr asasa

PostHeaderIcon n3

PostHeaderIcon najma-shaheen0011

PostHeaderIcon najma-shaheen0011

My Facebook
Facebook Pagelike Widget
Aanchal Facebook
Facebook Pagelike Widget
تبصرہ جات
Total Visits: Total Visits