PostHeaderIcon نعت رسول مقبولﷺ

شیئر کیجئے

نعت رسول مقبولﷺ

؁طائف میں کربلا کے سفینے کی روشنی
ملتی ہے اِس جہاں کو مدینے کی روشنی

کھاتے تھے زخم سب کی ہدایت کے واسطے
پھیلا رہے تھے آپ ؐ قرینے کی روشنی

اے موجبِ اوارض و سما اب کیجیئے عطا
یا صاحبِ لولاک مدینے کی روشنی

شَق الصَدر سے ہو گئے حیران جبرائیل
پھیلی تھی کلُ جہان میں سینے کی روشنی

رمضان ہو کہ ما ہ ربیع الا ولی ہو بس
چاروں طرف ہے ان کے مہینے کی روشنی

اک صاحبِ کمال کا وہ حسن با کمال 
مہکا رہا تھا اُن کے پسینے کی روشنی

یزداں بھی اُن پہ بھیجتا ہے رات دن درود
شمس و قمر سے بڑھ کے نگینے کی روشنی

جس وصلِ بے مثال میں طاری تھی بے خودی
بخشش میں تھی نماز خزینے کی روشنی

سرکار آپِٖٖؐ کی ہی گدا ہوں ٗکرم ہو بس 
درکار ہے مجھے بھی خزینے کی روشنی

شاہیں نبی کے دم سے ہی مجھ کو ہو ئی عطا 
مرتے ہوئے وجود میں جینے کی روشنی
دعاؤں کی طلبگار؛

ڈاکٹر نجمہ شاہین کھوسہ


شیئر کیجئے


تبصرہ کریں



My Facebook
Facebook Pagelike Widget
Aanchal Facebook
Facebook Pagelike Widget
تبصرہ جات
Total Visits: Total Visits