نئی شاعری

PostHeaderIcon کہاں پہ رہنا تھا مجھ کو،مگر کہاں پہ رہی

کہاں پہ رہنا تھا مجھ کو،مگر کہاں پہ رہی
میرا جہان ہی کب ہے یہ،میں جہاں پہ رہی

بجھے تھے درد کے جو بھی دئیے تھے آنکھوں میں
جہاں پہ درد کا ڈیرہ تھا ،میں وہاں پہ رہی 

جو شور مجھ میں بپا تھا وہ ختم ہو نہ سکا 
کہیں یقین کو کھویا ،کہیں گماں پہ رہی

نہ اس میں دوش تھا میرا ،نہ اس زما نے کا
حیا ت موت کی خواہش میں خود سناں پہ رہی

ہزار پردوں میں اس نے چھپا کے بھیجا جسے 
وہ خود نمائی کی خواہش میں خود دکاں پہ رہی

کہاں تھا میرا ٹھکانہ سمجھ نہ آیا مجھے
میں لامکان سے گزری تو کس مکاں پہ رہی

میں چپ تھی جب تو کوئی تذکرہ نہیں تھا کہیں 
لیا جو نام ترا پھر تو ہر زباں پہ رہی
ڈاکٹرنجمہ شاہین کھوسہ 

PostHeaderIcon

کہاں پہ رہنا تھا مجھ کو،مگر کہاں پہ رہی
میرا جہان ہی کب ہے یہ،میں جہاں پہ رہی

بجھے تھے درد کے جو بھی دئیے تھے آنکھوں میں
جہاں پہ درد کا ڈیرہ تھا ،میں وہاں پہ رہی 

جو شور مجھ میں بپا تھا وہ ختم ہو نہ سکا 
کہیں یقین کو کھویا ،کہیں گماں پہ رہی

نہ اس میں دوش تھا میرا ،نہ اس زما نے کا
حیا ت موت کی خواہش میں خود سناں پہ رہی

ہزار پردوں میں اس نے چھپا کے بھیجا جسے 
وہ خود نمائی کی خواہش میں خود دکاں پہ رہی

کہاں تھا میرا ٹھکانہ سمجھ نہ آیا مجھے
میں لامکان سے گزری تو کس مکاں پہ رہی

میں چپ تھی جب تو کوئی تذکرہ نہیں تھا کہیں 
لیا جو نام ترا پھر تو ہر زباں پہ رہی
ڈاکٹرنجمہ شاہین کھوسہ 

PostHeaderIcon یہ سجود کا حسیں پیرہن مر ی روح پر تو سجا پیا!

یہ جو عشق مسندکے لوگ ہیں،انہیں رمز سارے سکھا پیا!
یہ جنونِ عشق کی داستاں، انھیں حرف حرف سناپیا!

مرے چارہ گر،میں ہوں در بدر،میں تو تھک گئی،ہے عجب سفر
مری بے نشاں سی ہیں منزلیں،مجھے راستہ بھی دکھا پیا!

نہ حدود میں،نہ قیود میں،مرا دل ترے ہی وجود میںcc

میں تو آس تھی،میں تو پیاس تھی،کسی پھول کی میں بھی باس تھی
مری پتیاں گریں جا بجا، انہیں شاخ پر تو سجا پیا!

میں فقیر ہوں،میں حقیر ہوں۔کسی خواب کی نہ اسیر ہوں
میں عزیز ہو ں تو تجھے ہی بس، سو عزیز تر ہی بنا پیا!

میں فلک سے آئی خطا مری،اسے ڈھونڈناہے وفا مری
یہ جفا کی جو ہیں حقیقتیں،مری آنکھ کو وہ دکھا پیا!

مرے آسماں مرے سا ئباں،توُ ہی رازداں،توُ ہی مہرباں
جہاں لا مکاں کے ہیں سلسلے، وہیں میرا گھر بھی بنا پیا!

یہ جو آرزو و ں کا دیس ہے، یہ جو خاک خاک سا بھیس ہے
جو ازل ابد کا یہ بھید ہے،اسے بھید ہی میں بتا پیا!

یہ قدم قدم پہ بشارتیں، یہ نظر نظر میں زیارتیں
یہ بصارتیں،یہ بجھارتیں،مرے شہر دل کو دکھا پیا!

یہ جو میرے من میں ہے روشنی،یہی زندگی،یہی بندگی
مری فکر میں ترے ذکر میں جو چراغ ہیں وہ جلا پیا!
ڈاکٹر نجمہ شاہین کھوسہ

PostHeaderIcon اے مکین دل تجھے، اب نئے خواب ہوں مبارک

اے مکین دل تجھے، اب نئے خواب ہوں مبارک
ہے گناہ عشق میرا ،یہ ثواب ہوں مبارک

ترے آئینے میں روشن سا چراغ تھی سو مجھ کو 
نئے عکس ہوں مبارک،یہ عذاب ہوں مبارک

نہ ہی چوڑیاں نہ مہندی ،نہ ہی پھول ہیں نہ گجرے
مرے تن کو دکھ کے سارے یہ سحاب ہوں مبارک

مری آنکھ دشت میں ،جو ہے یہ ہجر آن بیٹھا
مری گردِ رہگزر کو ، یہ سراب ہوں مبارک 

نہیں اب مقدروں سے گلہ، کوئی مجھ کو صاحب 
مجھے شب نصیب ، تجھکو مہ تاب ہوں مبارک 

شب غم کی تیرگی میں یہ ہجوم ِ آہ و گریہ
دلِ پرملال تجھ کو یہ رباب ہوں مبارک 

نہ سمیٹ پائے شاہیں ،کوئی دل کی کرچیوں کو 
مرے ماتمی سفر کو یہ سراب ہوں مبارک

ڈاکٹر نجمہ شاہین کھوسہ 

PostHeaderIcon مل رہی ہیں چار سو کیوں وحشتیں بہکی ہوئی

مل رہی ہیں چار سو کیوں وحشتیں بہکی ہوئی
کس گلی میں رہ گئیں وہ قربتیں نکھری ہوئی

اب مہک تیری مری ہر پور میں یوں رچ گئی
منتظر ہیں آنکھ میں کچھ حیرتیں دہکی ہوئی

ہجر کی وحشت نے دل کو کر دیا رنجور اب
بھولتی جاتی ہوں میں اب صورتیں دیکھی ہوئی

اب کہاں اور کس رفاقت میں مجھے لینی ہے سانس
شہر میں ملتی ہیں ہر جا فر قتیں بکھری ہوئی

وادیوں میں دل کی اب خاموش سی اک شام ہے
دشت میں کھو ہی گئیں وہ شدتیں مہکی ہوئی

پائی تھیں نے ہم نے کبھی رنگوں بھرے اس شہر میں
گم ہو ئیں چاہت بھری وہ نکہتیں نکھری ہوئی

mehki hui

mehki hui

PostHeaderIcon  عشق کے راز نہ پو چھو صاحب ،،عشق کو دار پہ چڑھتے دیکھا

عشق کو آنکھ میں جلتے دیکھا

پھول کو آگ میں کھِلتے دیکھا

عشق کے راز نہ پو چھو صاحب

عشق کو دار پہ چڑھتے دیکھا

عشق ہے واجب ،اس کو ہم نے

جسم اور جاں میں اترتے دیکھا

عشق کے دام بھی لگ جاتے ہیں

مصر میں اس کو بِکتے دیکھا

فلک بھی حیرت سے تکتا تھا

دشت میں اِس کو پَلتے دیکھا

عشق انوکھا منظرجس میں

راز کو خواب میں ڈھلتے دیکھا

ہجر کا زخم تو زخم ہے ایسا

بخیہ گروں سے بھی کھلتے دیکھا

عشق وہ باغ ہے جس کو ہم نے

ہجر کی رت میں مہکتے دیکھا

اس کو ہوس کا نام نہ دینا

لوح پہ اس کو لکھتے دیکھا

غم کیا ہجر و وصال کا ا س کو

عشق میں جس کو بھٹکتے دیکھا

ڈاکٹر نجمہ شاہین کھوسہ

 

PostHeaderIcon میں ہو گئی تری مثال پیا

ہوں عشق میں مالا مال پیا
ہر سو بس تری دھمال پیا

ہو اک پل صرف وصال پیا
میں ہجر میں ترے نڈھال پیا

ترے خیال میں گزرے سال پیا
یہ عشق نظر کا کمال پیا

جس نگری عشق کا راج ہوا
کیاِ ِ ’’میں‘‘ ’’تو‘‘ کا جنجال پیا

تو روگ مرا ، تو جوگ مرا
میں ہو گئی تری مثال پیا

ترا حکم کہ میری راکھ ا’ڑے
انکار کروں ‘ نہ مجال پیا

میں تیری رضا پر راضی ہوں
جس راہ پہ اب تو ڈال پیا

اک بار تو دیکھ ‘ اک بار تو سن
ترے بن میرا کیا حال پیا

ڈاکٹر نجمہ شاہین کھوسہ

PostHeaderIcon دسمبر لوٹ جاتا ہے،،،

dec

PostHeaderIcon سکھی آج یہ کیسی نیند آئی

سکھی آج یہ کیسی نیند آئی
بے خواب آنکھوں کو خواب میں اُس
بچھڑے ماہی کی دید آئی
اب ڈر کے نہ میں آنکھیں کھولوں
اک لفظ نہ خواب میں بھی بولوں
کہیں اُس سے بچھڑ نہ جاؤں میں

جیتے جی مر ہی نہ جاؤں میں

ss

PostHeaderIcon جو نوحے کسی کی جدائی پہ لکھے

جو نوحے کسی کی جدائی پہ لکھے

زمانے کی ہرزہ سرائی پہ لکھے
وہ سب زخم اب پھول بننے لگے ہیں
مرے ہجر پر اُس کی یادوں کے دیپک
بہت ہنس رہے ہیں
مچلنے لگے ہیں
یہ دل ایک بنجر زمیں کی طرح تھا
یہاں ہم نے جو اشک بوئے تھے اک شب
وہ اب میری نظموں میں ڈھلنے لگے ہیں
جو غم تھے وہ سب ہاتھ ملنے لگے ہیں
ڈاکٹر نجمہ شاہین کھوسہ
jo nauhay

jo nauhay

My Facebook
Aanchal Facebook
تبصرہ جات
Total Visits: Total Visits